‏اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل کا 50 سال بعد کشمیر پراجلاس پاکستان کی بھرپور سفارتی کامیابی ہے۔
بھارت کسی خوش فہمی میں نہ رہے۔
بھارتی وزیردفاع گیدڑبھپکیاں نہ دیں،ہر جارحیت کامنہ توڑ جواب دیاجاۓ گا۔
ہم اپنے کشمیری بھائی بہنوں کے حق خود ارادیت کے حصول کے لیۓ ان کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔

A six-member Iranian Parliamentary delegation called on Governor Imran Ismail at Governor House in Karachi.

A six-member Iranian Parliamentary delegation called on Governor Imran Ismail at Governor House in Karachi.

ایران پا کستان پارلیمنٹری فرینڈ شپ گروپ کے 6 رکنی وفد کی گورنرسندھ عمران اسماعیل سے ملاقات

ملاقات میںدوطرفہ پاک ایران تعلقات ، پارلیمنٹ سطح کے تعاون اور اہمیت کے حامل دیگر امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا

کراچی ( جون 20 )

  ایران پاکستان پارلیمنٹری فرینڈ شپ گروپ کے سربراہ احمد امیر آبادی فرحانی کی سربراہی 6 رکی وفدنے گورنرہاﺅس میں گورنرسندھ عمران اسماعیل سے ملاقات کی۔ وفد میں ایرانی پارلیمنٹ کے اراکین محمد باسط دورازہی، محمد رضا صبا غیان ، محمد حسینی اور اسلامی کنسلٹینٹ اسمبلی کے ماہر علی یوسفی شامل تھے اس موقع پر قائد حزب اختلا ف فردوش شمیم نقوی ، صوبائی اسمبلی کے اراکین ربستان خان ، علی عزیز اور سعید آفریدی بھی موجود تھے ۔ ملاقات میںدوطرفہ پاک ایران تعلقات ، پارلیمنٹ سطح کے تعاون اور اہمیت کے حامل دیگر امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا ۔ واضح رہے کہ پاک ایران پارلیمنٹرین فرینڈ شپ گروپ 16جون سے 21 جون 2019 ءتک پاکستان کے دورے پر ہیں ۔ گورنرسندھ نے کہا کہ ایرانی پارلیمنٹ کے اراکین کو پاکستان آمد پر خوش آمدید کہتے ہیں امید ہے کہ ایرانی پارلیمنٹری کو دورہ پاکستان سے بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا۔انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان اور ایران کے درمیان مذہب، ثقافت ، ادبی اور شاعری مشترکہ ہیں دونوں ممالک کے درمیا ن محبت رواداری ایک دوسرے کا خیال بالخصوص مہمان نوازی قابل ستائش ہیں جبکہ ایران میں مذہبی مقامات کی زیارت کے لئے پاکستان سے بڑی تعداد زائرین جاتے ہیں اسی طرح پاکستان میں سیاحت کے لئے ایرانی بڑی تعداد میں یہاں کا رخ کرتے ہیں ،دونوں ممالک خطہ کو پر امن بنانے کے لئے مشترکہ اقدام کررہے ہیں جو کہ قابل تحسین ہے ۔ عمران اسماعیل نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تجارت اور کاروباری روابط کو مزید وسعت دینا وقت کی اہم ترین ضرورت ہے ، اراکین پارلیمنٹ کے وفود کے تبادلوں سے دونوں ممالک کے عوام مزید قریب آئیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ تمام تصفیہ طلب مسائل کا بین الاقوامی قوانین کے تحت پر امن حل تلاش کرنا ہوگا ایران کے ساتھ پاکستان کا باڈر 900 کلومیٹر طویل ہے جس سے دوطرفہ تعلقات کی اہمیت واضح ہوتی ہے ،5 فروری کشمیر ڈے پر ایران سے اظہار یکجہتی کے خواہش مند ہیں ۔ملاقات میں ایران پاکستان پارلیمنٹری فرینڈ شپ گروپ سربراہ احمد امیر آبادی فرحانی نے کہا کہ ایران پاکستان برادرانہ تعلقات مستحکم اور مضبوط ہیں ، وزیر اعظم پاکستان کے حالیہ دورہ ایران سے دوطرفہ روابط مزید مستحکم کرنے میں اہمیت کا حامل ثابت ہوگا ۔