گورنر سندھ عمران اسماعیل کا این ای ڈی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی کے 28 ویں کانووکیشن کی پروقار تقریب سے خطاب
ادارے کے فارغ التحصیل طلبا نہ صرف پاکستان سمیت دیگر ممالک کے اہم عہدوں پر خدمات انجام دے رہے ہیں۔
موجودہ حکومت کی بہترین معاشی پالیسی کے ثمرات عوام تک پہنچنا شروع ہوگئے۔
بین الاقوامی معاشی ادارے کی رپورٹ کے مطابق 2024ءمیں دنیا کی 70 فیصد معیشت کادارومدار جن 20 ممالک پر ہوگا اس میں پاکستان بھی شامل ہے۔
ہنر مند اور تعلیم یافتہ نوجوانوں کو اپنا کاروبار شروع کرنے کے لئے کامیاب نوجوان پروگرام کا آغاز کیا۔
جس کے تحت نوجوان انٹرپرینیورز کو آسان شرائط اور بلا سود قرضے فراہم کئے جارہے ہیں۔
کاروبار میں آسانیاں فراہم کرنے والے ممالک کی درجہ بندی میں کئی درجے بہتری ظاہر کرتی ہے کہ موجودہ حکومت پر بین الاقوامی سرمایہ کاروں کا اعتماد بڑھا ہے۔
این ای ڈی کا سی پی ای سی یونیورسٹیوں کے کنسورشیم کے ذریعہ چینی شہر کی نامور جامعات کے ساتھ قریبی روابط کا قائم ہونا خوش آئند امر ہے۔
ہمارے ملک کی ترقی کا دارومدار جامعات سے فارغ التحصیل ہونہار ، قابل اور با صلاحیت طلباءو طالبات کے ساتھ جڑا ہوا ہے۔
یونیورسٹیز اعلی تعلیم ، تحقیق اور ترقی کے مراکز ہوتے ہیں جن کا براہ راست اثر قومی معیشت پر پڑتا ہے۔
این ای ڈی یونیورسٹی نے قومی چیلنجوں کو مدنظر رکھتے ہوئے واٹر انسٹی ٹیوٹ کا قیام عمل میں لایا
قومی انکیوبیشن سینٹر کا قیام بھی عمل میں لایا جو کہ تخلیقی کاموں کے حوالے سے ایک بہترین پلیٹ فارم ثابت ہوگا۔
فارغ التحصیل طلبا اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے ملک کی تعمیر و ترقی میں اپنا بھرپور حصہ ڈالیں۔
حکومت این ای ڈی یونیورسٹی کو تعلیمی منصوبوں ، تحقیق اور ترقیاتی پروگرامز میں مدد فراہم کرنے میں معاونت جاری رکھے گی۔ گورنر سندھ کی یقین دہانی
اس موقع پر وفاقی وزیر برائے تعلیم و پروفیشنل ٹریننگ شفقت محمود، چیئرمین پاکستان انجینئرنگ کونسل انجینئر جاوید سلیم قریشی، طلباو طالبات اور ان کے والدین کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔
جلسہ تقسیم اسناد2019 میں 13طالب علموں کو ڈاکٹریٹ کی سند سے نوازا گیا۔ وائس چانسلر
27طالبا و طالبات میں گولڈ میڈلز تقسیم کیے گئے۔ ڈاکٹر سروش حشمت لودھی
جامعہ این ای ڈی سے اس برس پاس آؤٹ گریجویٹس کی تعداد 2113 جبکہ ماسٹرز کی تعداد 843 ہے۔ وائس چانسلر

Governor Imran Ismail speaking at the graduation ceremony of the 25th Senior Management Course at National Institute of Management in Karachi.

Governor Imran Ismail speaking at the graduation ceremony of the 25th Senior Management Course at National Institute of Management in Karachi.

وزیر اعظم کے وژن کے مطابق غربت کے خاتمے کے لیے موجودہ حکومت نے احساس پروگرام کا آغاز کیا، گورنر سندھ کا 25 ویں سینئر مینجمنٹ کورس کے شرکاءسے خطاب
کراچی جون13
گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا ہے کہ نیشنل اسکول آف پبلک پالیسی (NSPP) اور NIM کراچی ، پاکستان کے دو ایسے ادارے ہیں جہاں پر انتہائی اہمیت کی حامل تربیت فراہم کی جارہی ہے، اعلیٰ معیار کی تربیت اور پیشہ ورانہ مہارت رکھنے والی فیکلٹی ان اداروں کو ملک بھر میں ممتاز بناتی ہے، محدود وسائل میں انسٹیٹیوٹ کی موجودہ انتظامیہ تربیت کے معیار کو مزید بڑھا رہی ہے جو کہ قابل ستائش ہے، میرٹ کی بالادستی اور کرپشن سے پاک معاشرے کی تشکیل میں سول سرونٹس کا کلیدی کردار اہمیت کا حامل ہے ۔
ان خیالات کا اظہار انہوں نے نیشنل انسٹیٹوٹ آف مینجمنٹ کراچی میں 25 ویں سینئر مینجمنٹ کورس مکمل کرنے والے افسران سے خطاب کے دوران کیا۔ گورنرسندھ نے کورس مکمل کرنے والے افسران کو مبارک دیتے ہوئے کہا کہ سیاسی حکومت پالیسی تشکیل دیتی ہے اور اس پر متعلقہ افسران ہی عملدرآمد کراتے ہیںاس ضمن میں افسران کی اولین ذمہ داری ہے کہ وہ معاشرے میں حکومتی پالیسی کا مکمل عزم،محنت اور پیشہ ورانہ طریقہ سے نفاذ ہر صورت یقینی بنائیں جبکہ افسران اپنے تجربہ اور قابلیت کی بنیاد پر مسائل کے حل کے لئے فیصلے فوری جاری کریں کیونکہ تاخیر سے مسائل جنم لیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کورس مکمل کرنےوالے افسران پیشہ ورانہ مہارت ، اہلیت اور تجربہ سے وفاقی و صوبائی سطح کے مسائل کے حل میں اپنا کردار مزید موثر انداز سے ادا کرسکیں گے۔ گورنر سندھ نے کہا کہ ہماری زندگی کے تین مرحلے ہوتے ہیں اور ہم سب اس وقت اس مرحلے میں ہیں جہاں ہم آنے والی نسلوں کے لیے کچھ کر سکتے ہیں، تاکہ آئندہ آنے والی نسلوں کو قرضوں میں ڈوبا ہوا ملک کے بجائے روشن پاکستان ان کے حوالے کرسکےں، ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم سب مل کر ملک کی ترقی و استحکام میں اپنا حصہ ڈالیں۔ گورنر سندھ نے کہا کہ وزیر اعظم کے وژن کے مطابق غربت کے خاتمے کے لیے موجودہ حکومت نے ہیلتھ کارڈ کا اجراءکیا جس کے ذریعے 7 لاکھ روپے سے زائد رقم سے طبی سہولیات حاصل کی جاسکیں گی جبکہ روزگار، تعلیم اور دیگر سہولیات کی فراہمی یقینی بنانے کے لئے احساس پروگرام کا بھی آغاز کیا جارہا ہے۔ گورنر سندھ نے کہا کہ پاکستان کی تاریخ میں بڑے لوگوں پر ہاتھ ڈالنا آسان کام نہیں تھا مگر آج کے نئے پاکستان میں احتساب بلاتفریق کیا جارہا ہے۔ اس سے قبل چیف انسٹرکٹر اکرام علی نے بتایا کہ کورس میں وفاقی ، صوبائی اور آزاد کشمیر کے 19 گریڈ سے 20 گریڈ میں جانے والے 50 افسران شریک ہوئے ،16 ہفتوں کے کورس میں افسران کو عصر حاضر کے چیلنجز سے نبر د آزما ہونے ، عوامی مسائل کے حل بہتر نظم و نسق کو یقینی بنانے اور حکومت کی پالیسی کے نفاذ کے ضمن میں تربیت دی گئی۔ اس موقع پر NIM کے ڈائریکٹر جنرل محسن چاندنہ ، فیکلٹی اور دیگر افسران موجود تھے۔